وقتِ رخصت تھی گھٹن دل میں، نمی آنکھوں میں
تُو نے جاتے ہوئے اک بات کہی آنکھوں میںمیں چراغِ رہِ صحرا تھا، بجھا تھا جاناں
تُو نے دیکھا تو کوئی شمع جلی آنکھوں میںجب وجودِ شبِ ہجراں تھا میسر مجھ کو
ایک تصویر بڑی دیر رہی آنکھوں میںکیا بتاؤں تجھے ملنے سے ذرا پہلے تک
اک جہانِ تر و تازہ تھا مری آنکھوں میںمیں کہ تپتے ہوئے صحرا کا مسافر تھا بلالؔ
اور دنیا نے مجھے ڈھونڈا تری آنکھوں میں

محمد بلال اعظم

Share: