“عمر بھر ہاتھ نہ امروز نہ فردا آیا”*
کتنی عجلت میں ترے شہر سے چلتا آیا
 
رات اک نیند کا جھونکا مرے بستر سے پرے
اتنی وحشت تھی کہ خوابوں سے الجھتا آیا
 
آسمانوں پہ قدم رکھ نہیں پایا لیکن
للہ الحمد کہ مٹی پہ تو چلنا آیا
 
کائناتیں مری تفہیم کہاں کر پائیں
میں وہ عقدہ ہوں کہ یزداں کو کھٹکتا آیا
 
اے مرے ہجر زدہ، رات بُنی جب تو نے
میں نے دل دان کیا، خود میں سلگتا آیا
 
تیرے اِس دورِ پُر آشوب میں اکثر یہ ہوا
اشک آنکھوں سے نہیں، دل سے ٹپکتا آیا
 
عمر بھر اٹھتی رہی گردِ تحیر مجھ میں
عمر بھر اپنی ہی ہستی سے سرکتا آیا
 
تارِ خود سوزیِ ہجراں میں لپٹتا تھا وجود
سو کبھی رنگ بدلتا، کبھی جلتا آیا
 
ایک درویش سرِ دشتِ جنوں کا باسی
بر سرِ آبِ زماں درد چھڑکتا آیا
 
جان ایسے تو لبوں تک نہیں آئی میری
وقتِ معلوم کے سینے میں دھڑکتا آیا
 
تو نے اک بار کیا تھا مرے سینے میں ورود
تب سے جو لفظ بھی سوچا، وہ مہکتا آیا
 
میں تو مٹی تھا مگر تیری رفاقت کے طفیل**
بات بھی خوب کہی، رنگ بھی چوکھا آیا

٭نذرِ جعفر شیرازی

٭٭آخری شعر اساتذانِ کرام جناب عمران جعفر کمیانہ صاحب، جناب بلال اشرف باجوہ صاحب، جناب ڈاکٹر محمد افتخار شفیع صاحب کی نذر ہے۔

محمد بلال اعظم

Share: