جو ترے آستاں سے اٹھتا ہے
یوں کہو، اس جہاں سے اٹھتا ہےیہ فرشتے کہاں سے آتے ہیں
کون کون و مکاں سے اٹھتا ہےاب زمیں والے خیر مانگیں گے
حرفِ حق آسماں سے اٹھتا ہےاُس کی سیرت مثال بنتی ہے
جو مرے خاکداں سے اٹھتا ہے

٭نذرِ میر تقی میر

محمد بلال اعظم

Share: