جاں گسل، مہر بہ لب ٹھہری  ہے
یہ کہانی بھی غضب ٹھہری ہےاک وہ ساعت کہ جو جھیلی میں نے
نوکِ مژگاں پہ بھی کب ٹھہری ہےپھول کا چاک گریباں ہونا
رسمِ دنیا بھی عجب ٹھہری ہےآؤ آشفتہ سروں سے پوچھیں
چاندنی کس کے سبب ٹھہری ہےمیرے آنگن میں وہ خوشرنگ بلالؔ
تب نہیں ٹھہری تھی، اب ٹھہری ہے

محمد بلال اعظم

Share: